شریف خاندان کو بری کرنےکا اسلام آباد ہائیکورٹ کا فیصلہ معطل کرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں چیف جسٹس کے اعلان سے مسلم لیگ (ن)پر بجلی گرگئی

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)سپریم کورٹ نے نواز شریف و دیگر کی رہائی کے خلاف نیب اپیل پر فریقین کے وکلاء سے تحریری دلائل کے نکات طلب کر لیے ، چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے دوران سماعت ریمارکس دیئے کہ کیوں نہ ہائیکورٹ کا سزا معطلی کا فیصلہ کالعدم کردیں، بظاہر ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا ئو ں سے متعلق ہائی کورٹ کا فیصلہ معطل کرنے

کے علاوہ کوئی چارہ نہیں،ہائی کورٹ نے فیصلے میں سخت ترین الفاظ استعمال کیے، عدالتی نظیروں کو خاطر میں نہیں رکھا،اپنے فیصلے میں قیاس ارائیوں اور اور شواہد کا ذکر کیا، کیا سزا معطلی کا فیصلہ ایسا ہو سکتا ہے،کیا ماضی میں کسی عدالت نے اس قسم کا فیصلہ دیا، احتساب عدالت کے فیصلے کا کوئی ایک نقص ہی دکھا دیں، کس قسم کا نقص سزا معطلی کا باعث بن سکتا ہے،نواز خاندان نے کیس میں چار مختلف موقف اپنائے، آمدن سے زیادہ اثاثے ہیں، لندن کے اثاثے کس کے ہیں، ،لندن فلیٹ درخت سے تو نہیں اگے تھے، اگر پراپرٹی تسلیم کر لی تو بتانا پڑے گا کہ پراپرٹی کیسے خریدی، یہ ثابت کر دیں جب فلیٹس خریدے وسائل کیا تھے۔منگل کو چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی خصوصی بینچ نے سابق وزیراعظم نواز شریف، ان کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر)صفدر کی سزا معطلی کے خلاف نیب کی اپیل پر سماعت کی۔نیب پراسیکیوٹر نے موقف اپنایا کہ ہائی کورٹ میں دائر آئینی درخواستوں پر اعتراض کیا تھا کہ آئینی درخواست پر زیر سماعت کیس کے میرٹ پر بحث نہیں ہو سکتی، ملزم کی زندگی خطرے میں ہوتو ہی سزا معطل ہو سکتی ہے۔چیف جسٹس نے نیب پراسکیوٹر سے مکالمے کے دوران کہا کہ آپ اپنے تحریری نکات پہلے دے چکے ہیں، آپ کے نکات مد نظر رکھ کر ہی فریقین کو نوٹس جاری کیا تھا، نیب مقدمات میں عام طور پر ضمانت نہیں ہوتی، سزا معطلی میں شواہد کو نہیں دیکھا جاتا، کورٹ نے میرٹ اور شواہد پر فیصلہ دیا ہے، پہلے کبھی ایسا فیصلہ نہیں دیکھا، بہتر ہو گا خواجہ حارث کا موقف پہلے سن لیں۔خواجہ حارث نے اپنے دلائل میں موقف اختیار کیا کہ ان کے موکل پر آمدن سے زائد اثاثوں کا الزام لگایا گیا، کہا گیا ایون فیلڈ فلیٹس نواز شریف کے ہیں، اس کیس کے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *